17

عید الفطر کی نماز گھر پر ادا کی جا سکتی ہے یا نہیں ؟ معروف عالم دین جاوید غامدی نے فتوی جاری کر دیا

اسلام آباد (ویب ڈیسک) کرونا وائرس کے پھیلاؤ کے خدشے کے پیش نطر کچھ ممالک نے نمازعید کے اجتماع پر پابندی لگادی ہے۔ اس پر مختلف علمائے کرام کی متضاد آراء ہیں کہ عید نماز گھر پر پڑھی جاسکتی ہے یا نہیں، کچھ علماء کا کہنا ہے کہ عید نماز گھر پر نہیں پڑھی جاسکتی لیکن معروف عالم دین جاوید غامدی کا کہنا ہے کہ اگر ماہرین طب کہتے ہیں کہ آپ باہر جاسکتے ہیں تو ٹھیک، نہیں تو دو رکعت نماز عید گھر پر پڑھ سکتے ہیں ۔ معروف عالم دین جاوید احمد غامدی کا کہنا ہے کہ اگر ماہرین طب کہتے ہیں کہ آپ عید کی نماز کیلئے باہر نہیں جاسکتے تو آپ عید نماز گھر پر پڑھ لیں۔ آپکو دو رکعت نماز عیدپڑھنا ہوگی جس میں فرق صرف یہ ہے کہ خطبہ نہیں ہوگا۔ جاوید احمد غامدی کا مزید کہنا تھا کہ لوگ عید پر آن لائن ملاقات کا اہتمام کرلیں ،اگر ملنا لازمی ہے تو فاصلہ رکھ کر ملیں ۔آج کل تو ٹیکنالوجی نے بہت سہولت دیدی ہے کہ آپ آمنے سامنے آن لائن ملاقات کرسکتے ہیں۔ جاوید غامدی نے مزید کہا کہ اگر میں بد احتیاطی کرتا ہوں یہ خودکشی کے مترادف ہے اگر دوسرے مجھ سے متاثر ہوں تو یہ اقدام قتل ہے۔ واضح رہے کہ کچھ روز قبل دارالعلوم دیوبند نے ایک اہم فتویٰ جاری کرتے ہوئے مسلمانوں کو واضح ہدایت دی تھی کہ وہ عید کی نماز اپنے گھروں پر ہی ادا کریں۔ دارالعلوم دیوبند کا اپنے فتویٰ میں مزید کہنا تھا کہ اگر کسی وجہ سے عید کی نماز کی کوئی صورت نہیں بن پاتی ہے تو وہ پریشان نہ ہوں، مجبوری کے سبب ان پر نماز عید معافی ہوگی۔ البتہ ایسے افراد جو نماز عید نہ پڑھ پائیں۔ وہ اپنے اپنے گھروں میں دو یا چار رکعت پر مشتمل نماز چاشت کا اہتمام کریں تو بہتر ہوگا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں