چین-آسیان رہنماؤں کی کانفرنس میں لی کھہ چھیانگ کی شرکت

تین نومبر کی صبح چین کے وزیر اعظم لی کھہ چھیانگ نے تھائی لینڈ کے دارالحکومت بنکاک میں بائیسویں چین-آسیان (ٹین پلس ون) رہنماؤں کی کانفرنس میں شرکت کی۔لی کھ چھیانگ نے کانفرنس سے خطاب میں کہا کہ چین “دی بیلٹ اینڈ روڈ انیشیٹو” کی مشترکہ تعمیر کا آسیان اور مختلف ممالک کی ترقیاتی حکمت عملی سے ملاپ کرنا چاہتا ہے۔

چین اور آسیان ممالک کو کثیرالطرفہ پسندی اور آزاد تجارت کا مشترکہ تحفظ کرنا چاہیئے تاکہ مشترکہ ترقی پر عملدرآمد کیا جائے۔ فریقین کو جامع علاقائی اقتصادی ساتھی کے تعلقات کے معاہدے (RCEP) سے متعلق مذاکرات کو جلد از جلد مکمل کرنا چاہیئے اور چین-آسیان آزاد تجارتی علاقے کے معیار میں بہتری کے منصوبے پر احسن طریقے سے عملدرآمد کرنا چاہیئے۔ چین اور آسیان کو باہمی اسٹریٹیجک اعتماد کو مضبوط بناتے ہوئے علاقائی امن و استحکام کا تحفظ کرنا چاہیئے۔

لی کھہ چھیانگ نے مزید کہا کہ موجودہ اقتصادی راہداری کے ٹرانسپورٹ چینل کی تعمیر کے عمل کو تیز کیا جائے گا، بنیادی تنصیبات کے باہمی روابط کے حوالے سے تعاون کو مضبوط بنایا جائے گا۔ ڈیجیٹل معیشت، مصنوعی ذہانت ، بگ ڈیٹا اور نیٹ ورک سکیورٹی سمیت دیگر شعبوں میں تخلیقی تعاون کو آگے بڑھایا جائے گا۔ سمندری ماحولیاتی تحفظ، سمندری صنعت ، صاف اور قابل تجدید توانائی اور آبی ٹیکنالوجی سمیت دیگر شعبوں میں تبادلوں اور تعاون کو مضبوط بنانے کے لیے چین-آسیان” بلو اقتصادی شراکت داری “تعلقات قائم کیے جائیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں