0

کرس پیٹن کے ”چہرے کو ڈھانپنے پر پابندی کے ضابطے ” سے متعلق بیان کی سخت مذمت

ہانگ کانگ کے اخری گورنر کرس پیٹن نے حال ہی میں دعوی کیا کہ “چہرے کو ڈھانپنے پر پابندی کے ضابطے ” کی تیاری” ایک پاگل پن کا اقدام “ہے۔

اس حوالے سے ہانگ کانگ خصوصی انتظامی علاقے میں قائم وزارت امور خارجہ کے کمیشنر کے دفتر کے ترجمان نے سات اکتوبر کو کہا کہ کرس پیٹن کے بیانات نے ہانگ کانگ کے مختلف حلقوں کے باشندوں کے تشدد کی روک تھام کے اصل خیالات اور “چہرے کو ڈھانپنے کے خلاف قانون” پر عمل درآمد کے حقائق کو نظر انداز کرتے ہوئے منافقت، بداخلاقی اور سرد خون کے اصل چہرے کو پوری طرح سے بے نقاب کر دیا ہے۔ انہوں نے سخت الفاظ میں اس کی مذمت کی۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ نقاب پوش تشدد پسند افراد نے گزشتہ چار مہینوں کے دوران توڑ پھوڑ، لوٹ مار اور آتش زنی سمیت پولیس اہل کاروں اور عام شہریوں پر حملوں سمیت دیگر جرائم کا ارتکاب کیا۔ اس سے ہانگ کانگ کی سماجی سلامتی کو سنگین نقصان پہنچا ہے۔ سماجی نظم و نسق کی بحالی کے لیے خصوصی انتظامی علاقے کی حکومت کی جانب سے ” چہرے کو ڈھانپنے پر پابندی کے ضابطے ” کی تیاری قانونی ، مناسب اور انصاف پر مبنی اقدام ہے۔

ترجمان نے مزید کہا کہ ” چہرے کو ڈھانپنے پر پابندی کے ضابطے “کی تیاری عالمی برادری کے عمومی اقدامات کے مطابق ہے اور فرانس ، جرمنی ، کینیڈا ، اسپین آسٹریا ، برطانیہ اور امریکہ کی متعدد ریاستیں اس حوالے سے متعلقہ قانون پر عمل پیرا ہیں ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں