0

ویانا میں نامعلوم افراد کی فائرنگ سے7 شہری ہلاک اور 15 زخمی

آسٹریا کے دارالحکومت ویانا میں نامعلوم افراد کی فائرنگ سے7 شہری ہلاک اور 15 زخمی ہوگئے ہیں۔حملہ آوروں نے سٹی سینٹر سمیت چھ مختلف مقامات کو نشانہ بنایا۔ آسڑین وزیرداخلہ کے مطابق ایک حملہ آور مارا جاچکا ہے اور لیکن دوسرا تا حال فرار ہے۔
سیکیورٹی فورسزعلاقے میں سرچ آپریشن کر رہی ہیں اور حکومت نےآج اسکول بند کرنے کا اعلان کیا ہے۔ وزیرداخلہ کارل نیہامر نے مقامی میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’فائرنگ کا یہ واقعہ دہشتگرد حملہ ہے‘۔آسٹرین چانسلرسباستین کرزنے ویانا حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا صورت حالقابو میں ہے۔ مقامی میڈیا کے مطابق حملہ مقامی وقت کے مطابق 8 بجے کے قریب کیا گیا اور حملہ آور رائفلوں سے مسلح تھے۔ برطانیہ، جرمنی، فرانس اور ترکی سمیت کئی ممالک نے ویانا میں فائرنگ کے واقعہ کی شدید مذمت کی ہے۔
فرانس کے صدر ایمانوئیل میکخواں نے ٹوئٹر پر لکھا کہ یورپ کو حملوں سے ‘ہمت نہیں ہارنی’ چاہیے۔انھوں نے کہا کہ ‘ہم فرانسیسی لوگ آسٹریائی لوگوں کے صدمے اور دکھ میں شریک ہیں جنھیں ان کے دارالحکومت ویانا کے دل میں اس شام ہونے والے حملے سے دھچکا لگا ہے۔ فرانس کے بعد ہمارے ایک دوست پر حملہ ہوا ہے۔ یہ یورپ ہے۔ ہمارے دشمنوں کو معلوم ہونا چاہیے کہ اُن کا سامنا کس سے ہے۔’ویانا کے میئرمائیکل لدویگ نے بتایا کہ ایک خاتون اپنے زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے اسپتال میں دم توڑ گئی ہیں جبکہ ایک شخص کی ہلاکت حملے مقام پر ہوئی۔مقامی میڈیا کے مطابق 14 افراد اسپتال میں زیر علاج ہیں اور کم سے کم پانچ کی حالت تشویشناک ہے۔ فائرنگ کا واقعہ شہر کے مرکزی شویڈینپلاٹس سکوائر کے قریب پیش آیا ہے۔پولیس نے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ اس علاقے سے دور رہیں اور پبلک ٹرانسپورٹ کا استعمال نہ کریں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں