ہانگ کانگ میں ” اینٹی ماسک قانون ” کے نفاذ کا فیصلہ

ہانگ کانگ خصوصی انتظامی علاقے کی چیف ایگزیکٹو مسز کیری لام نے چار اکتوبر کو خصوصی انتظامی اجلاس بلایا جس میں فیصلہ کیا گیا کہ “ایمرجنسی ریگولیشن آرڈیننس” کے تحت ماسک پہننے پر پابندی کے ضوابط مرتب اور نافذ کیے جائیں تاکہ جلد از جلد معاشرتی نظم و ضبط بحال کیا جائے اور تشدد پر قابو پایا جائے۔

مسز کیری لام نے واضح الفاظ میں کہا کہ ایمرجنسی ریگولیشن آرڈیننس کے استعمال کا مطلب ہرگز یہ نہیں ہے کہ ہانگ کانگ ہنگامی صورتِ حال میں ہے۔ ہنگامی ریگولیشن آرڈیننس کے تحت، چیف ایگزیکٹو ان قواعد و ضوابط کو تشکیل دے سکتا ہے جنہیں وہ عوامی مفاد میں سمجھتا ہے۔ ہانگ کانگ کی حالیہ صورتحال ایسی ہے جس میں عوام کا تحفظ خطرے میں ہے۔

انہوں نے کہا کہ “اینٹی ماسکنگ قانون” کے نفاذ کی وجہ یہ ہے کہ پچھلے چار ماہ کے دوران پرتشدد کاروائیوں میں شریک تقریباً تمام مظاہرین نقاب پوش ہیں اور ان کا نقاب استعمال کرنے کا مقصد اپنی شناخت چھپانا اور قانون سے بچنا ہے۔ اس کے نفاذ سے پولیس کو قانون نافذ کرنے میں مدد ملے گی۔ ماسک ریگولیشن آرڈیننس چار اکتوبر کی رات بارہ بجے سے نافذ العمل ہوگا۔ قواعد و ضوابط کی خلاف ورزی پر زیادہ سے زیادہ 25،000 ہانگ کانگ ڈالر جرمانہ اور ایک سال قید کی سزا ہو گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں