عراق،حکومت مخالف پرتشدد مظاہروں میں 28 افراد ہلاک، کرفیو نافذ

بغداد (نیوز ڈیسک)عراق میں حکومت مخالف احتجاج کے دوران پرتشدد واقعات میں ہلاک افراد کی تعداد 28 ہو گئی ہے جبکہ دارالحکومت بغداد سمیت ملک کے مختلف شہروں میں ہونے والے احتجاجی مظاہروں کے دوران درجنوں افراد زخمی بھی ہوئے ہیں۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق عراق میں دو روز قبل بے روزگاری اور ناقص طرز حکمرانی کے خلاف شروع ہونے والے مظاہروں میں اس وقت شدت آئی جب پولیس اور مظاہرین میں جھڑپوں کے بعد مظاہروں کا سلسلہ دارالحکومت بغداد سے نکل کر ملک کے دیگر حصوں تک پھیلا۔عراق کے وزیرِ اعظم عبدالمہدی نے مزید مظاہروں کے پیش نظر بغداد میں کرفیو لگانے کا حکم دیا ہے۔ ناصریہ اور نجف شہر میں پہلے سے ہی کرفیو نافذ کر دیا گیا ہے۔مظاہرین کا مطالبہ ہے کہ ملک سے بدعنوانی، بے روزگاری ختم اور عوام کو شہری سہولیات فراہم کی جائیں۔حکام کے مطابق دو مظاہرین بغداد میں پرتشدد واقعات کے دوران ہلاک ہوئے جب کہ ایک شہری منگل کو ناصریہ میں ہلاک ہوا۔بدھ کو بھی مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے پولیس نے احتجاج کرنے والوں پر آنسو گیس کے شیل پھینکے۔ جب کہ اس موقع پر ہوائی فائرنگ بھی کی گئی۔محکمہ صحت کے حکام نے تصدیق کی ہے کہ بدھ کو مظاہرین اور پولیس کے درمیان جھڑپ کے نتیجے میں پولیس اہل کار سمیت چھ افراد ہلاک ہوئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں