بوآؤ ایشیائی فورم نے ایشیا میں غربت کے خاتمے کی رپورٹ جاری کر دی

بوآؤ ایشیائی فورم نے چوبیس ستمبرکو “ایشیا میں غربت کے خاتمے کی رپورٹ ” جاری کی۔رپورٹ کے چیف ایڈیٹر اور چین کی زرعی یورنیورٹی کے پروفیسر لی شیاؤ یون نے کہا کہ ایشیائی ممالک کے مشترکہ تجربات سے ظاہر ہے کہ سیاسی استحکام اور اقتصادی ترقی غربت کے خاتمہ کی اہم بنیاد ہیں۔ ایشیا میں غربت کے خاتمے کے ثمرات میں چین کی خدمات سب سے نمایاں ہیں۔

اسی دن ایک پریس کانفرنس میں لی شیاؤ یون نے کہا کہ ایشیائی ممالک نے 1990 سے 2015 تک غربت کی شکار آبادی کو نصف کم کرنے کا ہدف پورا کیا ہےاور ان اعدادو شمار میں آدھے سے زیادہ حصہ چین کا ہے۔

ایشیائی ممالک میں غربت کے خاتمے کے تجربات کے حوالے سے لی شیاؤ یون نے کہا کہ جہاں غربت کی شرح تیزی سے کم ہوئی ہے، وہاں عموماً سیاسی استحکام رہا ہے۔ اقتصادی ترقی غربت کے خاتمے کی اہم بنیاد ہے۔ چین نےغربت کے خاتمے کے لیے طویل مدتی منصوبے پرعمل درآمد کیا ہے اور دنیا کو قیمتی تجربات فراہم کیے ہیں۔

اسی دن بو آؤ ایشیائی فورم نے “دی بیلٹ اینڈ روڈ کی سرسبز ترقی کے کیسز کی تحقیقاتی رپورٹ” جاری کی جس میں دی بیلٹ اینڈ روڈ سے وابستہ ممالک میں ماحول دوست ترقی کے کیسز پیش کیے گئے جن کا مقصد ہی سرسبز ترقی کے حوالےسے اعتماد کو مضبوط بنانا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں