نہ ہوگا بانس اور نہ بجے گی بانسری، سرسید ٹاؤن پولیس کی انوکھی واردات

اسلام آباد(نیو زڈیسک)کراچی کے ویسٹ زون کے ڈسٹرکٹ سینٹرل کے سرسید ٹاؤن تھانے کے پولیس اہلکاروں نے موٹر سائیکل چوری روکنے کیلئے انوکھی کارروائی کی ہے۔ گھروں میں سوئے ہوئے شہری صبح اٹھیں گے تو ان کی موٹرسائیکلوں پر بیتی سامنے آئے گی لیکن علاقے کی سی سی ٹی وی فوٹیج نے سرسید ٹاؤن پولیس کی اس پراسرار اور مجرمانہ کارروائی کا بھانڈا پھوڑ دیا ہے۔سرسید ٹاؤن کے علاقے کی گزشتہ رات 8 بج کر 45 منٹ کی سی سی ٹی وی فوٹیج سوشل میڈیا پر وائرل ہورہی ہے۔ جس میں دیکھا جاسکتا ہے کہ پولیس موبائل سے اتر کر ایک اہلکار گلی میں کھڑی موٹر سائیکلوں کے پلگ کیپ نکال رہا ہے۔پولیس اہلکار کی اس پراسرار کارروائی کا مقصد تمام موٹر سائیکلوں کو ناکارہ بنانا ہوسکتا ہے، موٹرسائیکل کی پلگ کیپ نہیں ہوگی تو اس کے انجن کو کرنٹ نہیں ملے گا اور موٹرسائیکل اسٹارٹ نہیں ہوسکتی۔کورونا وائرس کے سلسلے میں کیے گئے لاک ڈاؤن میں روزانہ کی بنیاد پر گھروں سے نکلنے والے یہ شہری صبح موٹرسائیکل اسٹارٹ نہ ہونے کی صورت میں گھروں سے نہ نکلنے پر مجبور ہوجائیں گے یا موٹرسائیکل چوری نہیں ہوسکیں گی۔ کیونکہ موٹر سائیکل اسپیئر پارٹس کی دکانیں بند ہونے کی وجہ سے پلگ کیپ ملنا مشکل ہوگا۔ شاید اسی لئے یہ محاورہ بنایا گیا ہے کہ “نہ ہوگا بانس اور نہ بجے گی بانسری”۔سی سی ٹی وی فوٹیج میں پولیس موبائل پر آگے کی نمبر پلیٹ نہیں ہے تاہم پولیس موبائل پر ویسٹ زون اور سرسید ٹاؤن تھانہ واضح طور پر لکھا ہوا ہے۔ سی سی ٹی وی فوٹیج سامنے آنے پر ایس ایس پی سینٹرل عارف اسلم راؤ سے رابطہ کیا گیا تو ان کا کہنا ہے کہ انہوں نے ایس ایچ او سرسید ٹاؤن کی سرزنش کی ہے۔عارف اسلم راؤ کا کہنا ہے کہ ایس ایچ او نے موٹر سائیکل چوری کی وارداتوں پر موبائل اہلکاروں پر برہمی کا اظہار کیا تھا جس پر اہلکاروں نے ہینڈل لاک کھلی موٹر سائیکلوں کی چوری بچانے کے لیے پلگ کیپ نکالے۔ایس ایس پی کے مطابق سی سی ٹی وی فوٹیج سامنے آنے پر پولیس اہلکاروں کو تنبیہ کرکے آئندہ ایسی کارروائی سے روکا گیا ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں