انور مقصود نے ڈرامے نہ لکھنے کی وجہ بتادی

اسلام آباد(نیو زڈیسک)پاکستان شوبز انڈسٹری کے مشہور ترین مزح نگار، شاعر ، مصنف، ٹی وی میزبان اور مصور انور مقصود نے موجودہ دور میں ٹی وی پر نہ لکھنے کی وجہ بڑے مزاحیہ انداز میں بتادی۔انور مقصود اپنے بیٹے بلال مقصود کے ہمراہ انسٹاگرام پر لائیو آئے اور مداحوں کے سوالوں کے جواب دیئے، ماضی میں ’نادان نادیہ ‘ جیسے معروف ڈرامے تخلیق کرنے والے انور مقصود سے مداحوں کی بڑی تعداد کی جانب سے سوال کیا گیا کہ آپ نے اب ٹی وی کے لیے کیوں لکھنا چھوڑ دیا ہے ؟انہوں نے ماضی کی معروف ادبی شخصیات کا نام گنواتے ہوئے آگے سے ہی سوال کرڈالا کہ کیا اب یہ سارے لوگ لکھتے ہیں۔انور مقصود نے ایک محبت 100 افسانے لکھنے والے کا نام لیتے ہوئے کہا کہ کیا اب اشفاق احمد لکھ رہے ہیں، بانو قدسیہ نہیں لکھ رہیں ، فاطمہ ثریا بجیا بھی نہیں لکھ رہیں۔ تقریباً 55 برس ٹی وی کے لیے لکھنے والے انور مقصود نے ناموں کی فہرست اور اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ منو بھائی اور انتظار حسین بھی نہیں لکھ رہے۔انور مقصود نے کہا کہ جب میں یہ کہتا ہوں کہ جواب ملتا ہے کہ یہ سب تو وفات پا گئے ہیں تو میرا ان سب لوگوں کو جواب ہے کہ یہ سب اپنے ساتھ ڈرامہ بھی لے گئے ۔انہوں نے کہا کہ ڈراموں کے نام اور اشتہاروں سے ہی ان کے معیار کا اندازہ ہوجاتا ہے، ٹی وی کے چند معروف ڈراموں کے نام لیتے ہوئے طنز و مزاح کا سہارا لیتے ہوئے انہوں نے تنقید بھی کرڈالی جس سے سوشل میڈیا صارفین خوب محظوظ ہوئے ۔انہوں نے چند مشہور ڈراموں ’میرے پاس تم ہو، ناممکن ، چیخ اور دیگر ڈراموں کے نام لیتے ہوئے کہا کہ ایسے ناموں کے ساتھ تو میں نہیں لکھ سکتا۔دور حاضر کے لکھاری ڈرامہ لکھتے تہذیب بھولتے جارہے ہیں، انور مقصودانہوں نے کہا کہ بلاشبہ مذکورہ ڈرامے اچھے ڈرامے ہیں اور آپ لوگ پسند بھی کرتے ہیں۔انسٹاگرام پر لائیو آنے سے قبل بلال مقصود نے اپنے مداحوں سے یہ خبر شیئر کی تھی کہ وہ اپنے والد کے ساتھ رات ساڑھے آٹھ بجے لائیو آئیں گے جو سوال کرنا چاہیں کرلیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں