فلور ملز کو براہ راست گندم خریدنے کی اجازت ملنے پر ذخیرہ اندوزی کے خدشات

فیصل آباد (نیوز ڈیسک) رواں برس گندم خریداری سیزن کے دوران اوپن ڈور پالیسی کے تحت فلور ملز مالکان کو براہ راست گندم خریدنے کی اجازت ملنے سے گندم کی ذخیرہ اندوزی کے بھی خدشات منڈلانے لگے ہیں، پرائیویٹ افراد کے ہاتھوں گندم فروخت کرنے سے کاشتکاروں کو معاوضہ بھی کم ملنے کا خدشہ ہے۔گندم خریداری سیزن برائے سال -212020 کیلئے محکمہ خوراک نے انوکھی منطق اپنا لی۔ اوپن ڈور پالیسی کے تحت فلور ملز مالکان کو بھی کاشتکاروں سے ڈائریکٹ گندم خریدنے کی اجازت دے دی گئی۔ فلور ملز مالکان بغیر کسی رکاوٹ کے کاشتکاروں سے گندم خرید کر اپنے پرائیویٹ گوداموں میں ذخیرہ بھی کرسکیں گے۔دوسری جانب ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرولر علی عمران کہتے ہیں کہ فلور ملز مالکان کی جانب سے خریدی جانے والی گندم کے ریکارڈ کو جانچنے کیلئے بھی مانیٹرنگ کا نظام لایا جائے گا تاکہ ذخیرہ اندوزی اور قیمتوں میں اضافے کو کنٹرول کیا جا سکے۔ماہرین کا کہنا ہے گزشتہ برس بھی ذخیرہ اندوزوں کی جانب سے گندم اور آٹے کی قیمتوں میں ہوشرُبا اضافہ کیا گیا تھا اگر رواں برس کوئی بہتر حکمت عملی نہ اپنائی گئی تو حالات ماضی کی نسبت بھی زیادہ تشویشناک ہونے کا خدشہ ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں