’انزائیٹی‘ آپ کو کورونا سے قریب کر رہی ہے

اسلام آباد(نیوزڈیسک)وبائی بیماری کورونا وائرس کی صورتحال اور اس کے نتیجے میں جاری دنیا بھر میں لاک ڈاؤن سے لاکھوں لوگوں کی زندگیاں متاثر ہو رہی ہیں، وبائی بیماری میں مبتلا ہوجانے کا خوف نوکری کے چلے جانے اور گھر میں بیٹھے رہنے سے گھبراہٹ سمیت کئی مختلف ایسی سوچیں انسانوں کے ذہن میں چل رہی ہیں جس سے لاکھوں افراد ہر وقت کی بے چینی ، گھبراہٹ اور تذبذب کا شکار ہو رہے ہیں ۔طبی ماہرین کے مطابق ہر وقت بے چین اور پریشان رہنے سے انسانی دماغ صحیح طریقے سے کام کرنے کی صلاحیت کھو بیٹھا ہے ، ایسی صورتحال میں مضبوط قوت مدافعت رکھنے والے افراد بھی کمزور ہو جاتے ہیں اور جسمانی طور پر بیماریوں سے لڑنے کی قوت کھو بیٹھتے ہیں، ماہرین کے مطابق اس عالمی وبا کے دوران اس سے خود کو بچانے کے ساتھ ہمیں اپنے گھروں میں رہتے ہوئے ذہنی دباؤ، پریشانیوں اور ہر وقت کی بے چینی سے بھی محفوظ رکھنا ہے ۔خود کو بغیر کسی واضح وجہ کے خوف، غیر محفوظ، مشکل میں گھرے ہوئے اور ڈرے سہمے محسوس کرنے کا نام بے چینی اور ذہنی دباؤ ہے ، جسے اینزائیٹی بھی کہا جاتا ہے ، خطرہ محسوس کرتے رہنا ایک نارمل بات ہے جب تک جس سے آپ خطرہ محسوس کر رہے ہیں وہ کام مکمل نہ ہو جائے مگر بغیر کسی خطرے کے خود پر دباؤ محسوس کرتے رہنے سے انسان جسمانی طور پر بھی نہایت کمزور ہو جاتا ہے جس کے براہ راست اثرات انسانی جسم پر بھی پڑتے ہیں ، ایسے میں قوت مدافعت کے کمزور ہو جانے سے انسان کئی بیماریوں کا شکار ہو جاتا ہے ۔بے چینی بہت زیادی یا کم سطح پر بھی ہو سکتی ہے ، ہر انسان کی اس کی عمر کے مطابق یہ ذہنی دباؤ اور بے چینی کی بیماری اسے لاحق ہوتی ہے ، آج کل کورونا وائرس کے پیش نظر ہر وہ انسان پریشان ہے جو نوکری ، کاروبار یا پڑھتا ہے ، عمر جو بھی اس کے اٹیک آپ کی ذہنی صلاحیت پر منحصر ہیں کہ آپ کتنے مضبوط ہیں کسی بھی بیماری کو برداشت کرنے کے۔بے چینی اور ذہنی دباؤ کا شکار اکثر افراد ریٹائرمنٹ ، نوکری چلےجانے کے بعد، معاشی طور پر کمزور ہونے کے بعد یاکسی بڑے حادثے گزرنے کے بعد ہوتے ہیں ۔پسینے آتے رہنا ، سانس کا بیٹھے بیٹھے پھولنا ، گھبراہٹ رہنا ، تھکے تھکے محسوس کرنا ، کوئی بھی کام توجہ سے نہ کر سکنا ، پیشاب کا بار بار آنا ، منہ کا سوکھنا ، الٹی ، متلی محسوس ہونا ، نیند کا نہ آنا بے چینی کی نشانیاں ہیں۔اینزائیٹی ایک ذہنی مسئلہ ہے، اس کے لیے کسی اچھے معالج سے رجوع کریں، آپ کا معالج آپ کی بیماری کی نوعیت کے مطابق آپ کا علاج کرے گا۔ذہنی دباؤ کم کرنے اور آپ کو سب سے پہلے پر سکون بنانے کے لیے آپ کا معالج آپ کو چائے، کافی سمیت میٹھے مشروبات چھوڑنے کا کہے گا۔آپ کا معالج آپ کے ذہنی دباؤ، پریشانی، گھبراہٹ کا علاج ادویات کے ذریعے بھی کر سکتا ہے ۔آپ کا معالج میڈیکل ٹیکنیکس کے استعمال سے آپ کو ذہنی پر سکون بنانے کے لیے متعدد سیشن رکھے گا جس کے بعد آپ خود کو ہلکا، ترو تازہ اور سونے کے قابل محسوس کر سکیں گے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں