0

پاکستان میں پٹرول کی مانگ میں کمی۔۔!! حکومت نے پٹرولیم مصنوعات کی امپورٹ بند کر دی

نیو یارک (نیوز ڈیسک ) پاکستان میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں مزید کمی کا امکان ختم ہونے لگا، عالمی مارکیٹ میں خام تیل 30 فیصد مہنگا ہوگیا، امریکی مارکیٹ میں برنٹ کروڈ آئل کی قیمت 28 ڈالر فی بیرل کی سطح تک پہنچ گئی، سعودی عرب اور روس کی جانب سے تیل کی پیداوارمیں کمی کرنے کے امکان کے بعد قیمتوں میں اضافہ ہوا۔تفصیلات کے مطابق کرونا وائرس خدشات اور سعودی عرب، روس تنازعے کے باعث عالمی مارکیٹ میں خام تیل کی قیمتوں میں مسلسل کمی ہو رہی تھی، تاہم جمعرات کے روز امریکی مارکیٹ میں برینٹ خام تیل اور امریکی خام تیل کی قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے۔ بتایا گیا ہے کہ برینٹ خام تیل کی قیمت تقریباً 28 ڈالر فی بیرل کی سطح پر آگئی ہے۔ جبکہ امریکی خام تیل کی قیمت اضافے سے 25 ڈالر فی بیرل کی سطح تک آگئی ہے۔جمعرات کے روز امریکی صدر نے بیان جاری کیا کہ ان کی سعودی ولی عہد محمد بن سلمان اور روسی صدر ولادی میرپیوٹن سے تیل کی پیداوار کے حوالے سے بات چیت ہوئی، امید ہے دونوں تیل کی پیداوار میں 10ملین بیرل کی کمی کریں گے۔ 10ملین بیرل یا زیادہ کمی ہوئی تو یہ تیل اور گیس صنعت کے لیے بڑا اچھا ہوگا۔امریکی صدر کے اس بیان کے فوری بعد مارکیٹ میں خام تیل کی قیمتوں میں زبردست اضافہ دینے میں آیا۔ تاہم ڈونلڈ ٹرمپ کے بیان کے برعکس سعودی عرب میں خام تیل کی سپلائی ریکارڈ سطح پر آگئی۔ عالمی تیل مارکیٹ میں خام تیل کی وافر موجودگی کے باوجود آرامکو نے ایک روز میں 18.8 ملین بیرل تیل سپلائی کیا۔ ماہرین کہہ رہے ہیں کہ سعودی عرب اور روس کے درمیان خام تیل کی فی بیرل قیمتوں کے حوالے سے جنگ شدت اختیار کر چکی ہے جس کے باعث عالمی مارکیٹ میں خام تیل کے نرخ گزشتہ 18سال کی کم ترین سطح پر آ گئے ہیں۔تاہم امریکی مارکیٹ میں خام تیل کی قیمتوں میں اضافہ دیکھا جا رہا ہے۔ اس حوالے سے پاکستان میں معاشی ماہرین کا کہنا ہے کہ امریکی مارکیٹ کی طرح عالمی مارکیٹ میں بھی تیل کی قیمتوں میں اضافہ ہو سکتا ہے۔ ایسے ہونے کی صورت میں پاکستان موجودہ کم قیمتوں سے زیادہ فائدہ نہیں اٹھا پائے گا۔ پاکستان میں لاک ڈاون کے باعث پیٹرولیم مصنوعات کی طلب میں کمی آئی ہے، اس لیے حکومت فی الحال پیٹرولیم مصنوعات کی امپورٹ بند کر چکی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں