0

تبلیغی جماعت کے 7افراد کورونا وائرس کے باعث جاں بحق

اسلام آباد (نیوز ڈیسک )بھارت میں تبلیغی جماعت کے 7افراد جاں بحق ہو گئے جبکہ 27افراد میں کورونا وائرس کی تشخیص ہوئی ہے ۔بھارتی اخبار انڈیا ٹوڈے میں شائع ہونے والی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ حکومتی اعداد و شمار و میڈیا رپورٹس کے مطابق بھارتی دارالحکومت نئی دہلی کے علاقے ناظم الدین کے علاقے میں عالمی تبلیغی جماعت کا تین روزہ اجلاس ہوا تھا جس میں دنیا کے متعدد ممالک سمیت بھارتی افراد نے شرکت کی تھی۔رپورٹ میں بتایا گیا کہ تبلیغی جماعت میں شامل ہونے والے افراد کی حتمی تعداد کی تصدیق نہیں ہو سکی تاہم اس میں شرکت کرنے والے افراد کی تعداد 3400 تک تھی جس میں سے زیادہ تر غیر ملکی تھی۔ناظم الدین مرکز میں 15 سے 18 مارچ کے درمیان تین روزہ تبلیغی اجتماع ہوا اور بعد ازاں مذکورہ اجلاس میں شامل ہونے والے افراد بھارت کی دوسری ریاستوں میں پھیل گئے۔رپورٹ میں بتایا گیا کہ تبلیغی اجتماع میں شامل ہونے والے 10 انڈونیشیائی لوگوں میں 20 مارچ کو ریاست تلنگانہ میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی، جس کے بعد حکام نے تبلیغی جماعت کے شرکا کے حوالے سے غور و فکر کرنا شروع کردیا۔بھارتی وزیر اعظم نے 22 مارچ کو ملک میں 14 گھنٹے کے لیے جنتا کرفیو نافذ کیا، تاہم اگلے ہی دن تبلیغی مرکز میں شامل ہونے والے 1500 افراد وہاں سے نکلنے میں کامیاب ہوگئے اور وہ بھارت کی مختلف ریاستوں اور شہروں میں پھیل گئے اور ایک ہزار سے زائد افراد مرکز میں موجود رہے۔
حکومت نے 25 مارچ کو ناظم الدین تبلیغی مرکز کے علاقے کو سیل کرکے اسے قرنطینہ میں بند کردیا جب کہ وہاں مقیم تمام افراد کے ٹیسٹ کیے جانے کا آغاز کردیا۔تبلیغی مرکز میں موجود 27 افراد میں کورونا کی تشخیص بھی ہوئی جب کہ دیگر 300 سے زائد افراد کو بھی طبیعت خراب ہونے کے بعد ہسپتال منتقل کردیا گیا تھا۔تبلیغی مرکز میں شامل ہونے والے افراد کے دیگر ریاستوں میں پھیلنے کے بعد ہریانہ سے لے کر تلنگانہ، مقبوضہ کشمیر سے لے کر انڈمان جزائر، اترپردیش سے لے کر تامل ناڈو، مدھیا پردیش سے لے کر کرناٹکا اور آندھرا پردیش میں بھی تبلیغی افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی۔تبلیغی جماعت میں شامل ہونے کے بعد کورونا میں مبتلا ہونے والے 7 افراد بھی بھارت میں ہلاک ہوچکے ہیں جن میں سے ایک مقبوضہ جموں و کشمیر کے شہر سری نگر جب کہ باقی 5 تلنگانہ اور ایک کیرالہ میں ہلاک ہو چکا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں