پوری دنیا میں وباءپھیلنے کے باوجود چین میں چمگادڑوں ، خرگوشوں اور دیگر جانوروں کے گوشت کی فروخت جاری، دنیا والوں نے اپنے سر پکڑ لیے

بیجنگ(نیوز ڈیسک) کورونا وائرس کے متعلق سائنسدان ایک سے زائد تحقیقات میں بتا چکے ہیں کہ یہ چمگادڑ اور سانپ جیسے جانوروں سے پھیلا جن کا گوشت چین کے شہر ووہان کی گوشت مارکیٹ میں فروخت ہوتا ہے۔ اب چین نے تو وائرس پر قابو پا لیا ہے اور فتح کا جشن منا رہا ہے لیکن باقی دنیا میں اس کی تباہ کاریاں جاری ہیں ایسے میں آپ یہ سن کر سر پکڑ کر بیٹھ جائیں گے کہ ووہان اور چین کے دیگر شہروں کی گوشت مارکیٹس میں اب بھی چمگادڑوں، سانپوں، خرگوشوں اور دیگر جنگلی جانوروں کا گوشت فروخت ہو رہا ہے۔میل آن لائن کے مطابق کتے، بلیوں اور ہر طرح کے جنگلی جانوروں کا گوشت اب بھی چین کی گوشت مارکیٹس میں آسانی سے دستیاب ہے۔ یہ جانور مارکیٹس میں گندے خون آلود فرش پر کاٹے جا رہے ہیں اور ان کا گوشت فروخت کیا جا رہا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس جیسے ہی چین میں کم ہوا، یہ مارکیٹس ایک بار پھر اسی انداز میں کام کرنے لگی ہیں۔ اسی طرح جنگلی جانور خوراک اور روایتی چینی ادویات کے لیے فروخت ہو رہے ہیں۔ میل آن لائن کے بیجنگ میں موجود نمائندے کا کہنا ہے کہ اب چین میں ہر شہری بے خوف ہو چکا ہے۔ ان کا خیال ہے کہ اب وباءختم ہو چکی ہے اور اب پریشانی کی کوئی بات نہیں، چنانچہ گوشت مارکیٹس اسی طرح آباد ہو گئی ہیں اور لوگ دھڑا دھڑ جنگلی جانوروں کا گوشت خریدتے نظر آ رہے ہیں۔اب صرف اتنا فرق ہے کہ ان مارکیٹس میں موجود سکیورٹی گارڈز اب کسی کو جانوروں کی تصاویر نہیں بنانے دیتے۔ کورونا وائرس سے پہلے یہ پابندی نہیں تھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں