مودی سرکار ذلت کی انتہاپراتر آئی ، کروناکے مسلم مریضوں کیلئے ہسپتال کے دروازے بند ،داخل کرنیوالوں کیساتھ کیاسلوک کیا جائیگا؟

جا نئے
اسلام آباد(ویب ڈیسک)بھارت میں مودی سرکار کرونا وائرس کی عالمی وبا کے دوران بھی مسلم دشمن اقدامات کرنے سے باز نہیں آئی، بھارت میں مسلمانوں کیلئے سرکاری ہسپتالوں کے دروازے بھی بند کر دئیے گئے ۔ کرونا کا شکار مسلمانوں کے حوالے سے باقاعدہ مودی سرکار کی طرف سے زبانی احکامات جاری کئے گئے ہیں کہ کسی بھی سرکاری ہسپتال میں ایسے کرونا مریض کو داخل نہ کیا جائے جس کا مذہب اسلام ہو۔روزنامہ 92نیوزکے مطابق ایسے وقت میں جب دنیا بھر میں اس وبا سے نمٹنے کیلئے مذہب اور فرقے سے ہٹ کر اقدامات کئے جا رہے ہیں، مودی سرکاراور انتہاپسند تنظیمیں اس بحرانی صورتحال میں بھی مسلم دشمنی کا مظاہرہ کر رہی ہیں۔ باوثوق ذرائع کے مطابق آر ایس ایس غنڈوں نے مختلف سرکاری ہسپتالوں کے باہر لکھ کر لگا دیا ہے کہ یہاں مسلمانوں کا داخلہ منع ہے اور اگر کسی ڈاکٹر نے انہیں داخل کیا تو وہ انجام کا خود ذمہ دار ہو گا ۔ بھارت میں مسلمان ڈاکٹروں پر بھی زمین تنگ کی جا رہی ہے کہ وہ کہیں مسلمان مریضوں کا علاج نہ کرنا شروع کر دیں۔ دوسری جانب بھارتی فوج بھی کرونا سے اس قدر خوفزدہ ہے کہ فوجیوں کے بجائے نچلے درجے کے ہندوؤں کو بطور رضاکار بھرتی کر کے انہیں فوجی وردیاں پہنا کر فیلڈ میں بھیجا جا رہا ہے جبکہ بزدل ہندو فوجی افسروں نے اپنے آپ کو دفاتر میں بھی اس قدر محدود کر لیا ہے کہ کوئی نچلی سطح کا افسر بھی ان کے کمرے میں نہیں جا سکتا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں