0

یہ عمران خان ہے جس کو ہرانا اتنا آسان نہیں ۔۔۔ مولانا فضل الرحمان نے ناقابل یقین اعتراف کرتے ہوئے اپوزیشن جماعتوں سے ناقابل یقین شکوہ کر دیا

چارسدہ(ویب ڈیسک ) جمعیت علمائے اسلام ف کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے اپوزیشن جماعتوں سے شکوہ کیا ہے کہ تمام سیاسی جماعتوں کو ایک پلیٹ فارم پر اکھٹا کیا مگر میرا ساتھ کسی نے نہیں دیا۔ان کا کہنا تھا کہ ا پوزیشن جماعتوں نے اسلام آباد آزادی مارچ میں علامتی طور پر شرکت کی۔چارسدہ میں ختم نبوت کانفرنس سے خطاب میں مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ سیاست دان استقامت اور مضبوطی کے ساتھ آگے نہیں بڑھتے تو وہ قومی مجرم ہوں گے۔ان کا کہنا تھاکہ جعلی الیکشن کراکر ناجائز حکومت بنائی گئی، عمران خان کی پشت پر امریکا اور یورپ کھڑا ہے۔انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت خود کو شیرپکارتی رہی مگر جے یو آئی نے چوہا بنا دیا ہے، 70سال میں اتنے قرضے نہیں لیے گئے جتنے 18 مہینے میں لیے گئے، ملک کی معاشی صورتحال تباہ ہو چکی ہے اور نت نئے ٹیکسوں اور آسمان کو چھوتی مہنگائی نے عوام کو خود کشیوں پر مجبورکیا ہے۔جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کا افتتاحی اجلاس اتوار کو پیرس میں شروع ہوگا جو پانچ روز تک جاری رہے گا ۔ ذرائع کے مطابق پاکستانی وفد میں وزارت خزانہ، اسٹیٹ بینک ، ایف ایم یو کے حکام بھی شامل ہیں ،اجلاس میں پاکستان کا نام گرے لسٹ سے نکلنے یا برقرار رکھنے سے متعلق فیصلہ ہوگا،ایف اے ٹی ایف نے پاکستان کو جون 2018ء میں گرے فہرست میں شامل کیا تھا،پاکستان نے ایف اے ٹی ایف ایکشن پلان پر عملدرآمد میں ٹھوس پیش رفت کی، پاکستان نے منی لانڈرنگ اور ٹیرر فنانسنگ کے خطرات پر قابو پایا گیا ہے۔ذرائع نے بتایا کہ پاکستان کو بلیک لسٹ میں شامل کیے جانے کا کوئی امکان نہیں ۔ذرائع کے مطابق پاکستان کو بلیک لسٹ میں ڈالنے کی کوشش ناکام بنانے کیلئے درکار تین ووٹ موجود ہیں ،گرے لسٹ سے نکلنے کیلئے پاکستان کو 15 ووٹ چاہئیں۔ذرائع نے بتایا کہ گرے لسٹ سے نکلنے کیلئے پاکستان نے بھرپور سفارت کاری کی ہے۔ ذرائع کے مطابق گرے لسٹ سے نکلنے کے لیے پاکستان کو 12 ملکوں کی حمایت ملنے کی امید ہے، چین، ترکی اور ملائشیا پہلے ہی حمایت کر چکے ہیں۔ایف اے ٹی ایف نے پاکستان کو جون 2018 میں گرے فہرست میں ڈال کر 27 ایکشن پلانز کے تحت ستمبر 2019 تک کا وقت دیا تاہم بعد میں مدت مزید 3 ماہ بڑھا دی گئی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں