0

ترک صدر طیب اردگان کیساتھ دورہ پاکستان پر آئی فاطمہ ابو شناب کون ہیں؟ ایسی حقیقت سامنے آ گئی کہ عوام ہکا بکا رہ گئی

لاہور(ویب ڈیسک) عمران خان اور رجب طیب اردگان کے درمیان مترجم کے فرائض سرانجام دینے والی یہ خاتون فاطمہ ابو شناب ہیں، جو طیب اردوان کی انگریزی/ ترکی زبان کی ترجمان ہیں۔ یہ پورا خاندان عزت دار اور اپنے مذہبی اور شریف پس منظر کی وجہ سے جانا جاتا ہے اور فاطمہ ابوشناب ترکی کی مشہور پارلیمینٹیرین اور مصنفہ مروہ قواکچی کی بیٹی ہیں جن کی پوری زندگی حجاب کےلئے جدوجہد میں گزری، حتی کہ حجاب پہننے کی وجہ سے ان کو پارلیمنٹ کی سیٹ سے ہاتھ دھونا پڑا، مگر وہ ثابت قدم رہیں۔ اور مقدمہ بھی جیت لیا۔ واضح رہے کہ 1999 کو فضیلت پارٹی کی رکن مروہ قواکچی نے سر پر دوپٹہ لیکر حلف برداری کی تقریب میں شرکت کی تھی جس پر سیکولر نظریات رکھنے والے ارکان بھڑک اٹھے تھا اور اسے انتشارپسندی قرار دیا تھا۔ مروہ قاؤقچی بغیر حلف اٹھانے پارلیمنٹ سے باہر آگئی تھیںبعد ازاں انہیں حجاب پہننے کی پاداش میں اپنی رکنیت سے ہاتھ دھونا پڑابعد ازاں ان پر امریکی شہریت رکھنے کا الزام لگا اور اس کی تُرک شہریت بھی ختم کردی تھی۔ بعدازاں طیب اردگان اقتدار میں آئے تو انہوں نے مروہ قواکچی کو ملائیشیا میں سفیر مقرر کردیا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں