0

نوعمر لڑکی کے ساتھ نازیبا حرکت کرنے کے الزام میں سکول چوکیدار گرفتار

کراچی (نیوز ڈیسک ) نوعمر طالبہ سے نازیبا حرکت کرنے کے الزام میں سکول چوکیدار گرفتار کر لیا گیا ۔ تفصیلات کے مطابق کراچی کے علاقے رضویہ میں نجی سکول کے چوکیدار پر مقدمہ درج کرا دیا۔ مقدمہ نجی سکول میں زیر تعلیم بچی کے والد کی جانب سے کرایا گیا ۔ مقدمہ میں الزام عائد کئے گئے کہ سکول کے چوکیدار نے بچی کے ساتھ دست درازی کی، جس پر پولیس نے ایکشن لیتے ہوئے چوکیدار کو گرفتار کر لیا۔بتایا گیا ہے کہ چوکیدار کو گرفتاری کے بعد تھانے منتقل کردیا گیا ۔ پولیس نے موقف اختیار کیا ہے کہ بچی کے ساتھ نازیبا حرکت کرنے کے الزامات پر تحقیقات شروع کردی گئی ہیں۔ معاملے کو تمام پہلو سے جانچا جائے گا۔ واضح رہے کمسن بچیوں کے ساتھ نازیبا حرکات کرنے کے واقعات میں اضافہ ہو رہا ہے۔زیادتی کے واقعات میں بڑھتے جا رہے ہیں ۔ یاد رہے پاکستان میں جنسی زیادتی میں ملوث افراد کیخلاف سخت سزاؤں کا تعین کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر نے جنسی زیادتی کے مجرموں کو کو سرعام پھانسی دینے کی حمایت کر دی۔اسد قیصر کا نجی ٹی وی کو دیے گئے انٹرویو میں کہنا ہے کہ وہ سرعام پھانسی کی قرار داد کی حمایت کرتے ہیں۔خاتون اینکر نے سوال کیا کہ کیا آپ بچیوں سے زیادتی کے مجرموں کو سرعام پھانسی دینے کی بل کی حمایت کرتے ہیں؟ جس پر اسد قیصر نے جواب دیا کہ میں بلکل اس قرار داد کو سپورٹ کرتا ہوں۔کیونکہ یہ عمل کرنےوالے انسان نہیں حیوان ہیں،کہا جاتا ہے کہ سرعام پھانسی دینا انٹرنیشنل قوانین کے خلاف ہے،لیکن اقوام متحدہ ہمارا کب خیال کرتی ہے؟مسئلہ کشمیر پر کوئی دلچسپی نہیں لی گئی۔ہمارے معاشرے میں اس طرح کے واقعات ہو رہے ہیں جس سے معاشرہ تباہ ہو رہا ہے،میں جب اپنے بچوں کو ذہن میں رکھ کر سوچتا ہوں تو شاید صرف سرعام پھانسی دینے پر بھی میری تسلی نہ ہو۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں