چین میں پھنسے پاکستانی طالبعلم کے حوالے سے افسوس ناک خبرآگئی

ووہان (ویب ڈیسک) چین میں پھنسے پاکستانی طالبعلم مکمل بے بس، حسن کے والد نے گھر آنے کی درخواست کی، الگے دن انتقال کر گئے۔ تفصیلات کے مطابق چین کے شہر ووہان میں پھنسے پاکستانیوں کے لیے مشکلات تاحال کم نہ ہو سکی ہیں۔ شہرکو مکمل طور پر بند کردیا گیا ہے اور کسی کو شہر میںجانے کی اجازت نہیں ہے۔ ایسے میں پاکستانی حکومت نے یہ اعلان کیا تھا کہ وہ چین سے اپنے طالبعلموں کو واپس نہیں لائیگی۔ایسے میں چین کے شہر ووہان میں پاکستانی طالبعلم حسن پی ایچ ڈی کی تعلیم حاصل کر رہا ہے۔ کچھ روز قبل اسکی اپنے والد کے ساتھ بات ہوئی۔ اسکے والد نے اس سے کہا کہ وہ جلد از جلد وطن واپس آ جائے۔ اگلے ہی روز حسن کے اسی سالہ والد کا دل کے عارضے کی وجہ سے انتقال ہو گیا، جس نے حسن زندگی میں بہت گہرے اثرات چھوڑے۔چین کے صوبہ ہوبی جہاں وہان شہر موجود ہے جو کہ کرونا وائرس کا مرکز سمجھا جاتا ہے میں قریباً ایک ہزار پاکستانی موجود ہیں۔واضع رہے کہ بھارت سمیت بنگلہ دیش نے چین سے اپنے طالبعلموں کو واپس بلوا لیا ہے۔ لیکن پاکستان کی جانب سے یہ حکم دیا گیا تھا کہ پاکستانی طالبعلموں کو واپس نہیں لایا جائیگا۔ اس حوالے سے بھارت کے کچھ طالبعلموں نے اپنی حکومت سے گزارش کی تھی کہ وہ پاکستانی طلبہ کو چین سے نکالنے میں پاکستان کی مدد کریں۔ لیکن بھارتی حکومت کی جانب سے یہ کہا گیا تھا کہ اگر پاکستان کی حکومت ان سے درخواست کریگی تو ایسا قدم اٹھانے کے بارے میں سوچا جائیگا۔ چین میں پھنسے پاکستانی طالبعلم مکمل بے بس، حسن کے والد نے گھر آنے کی درخواست کی، الگے دن انتقال کر گئے۔ تاہم نہ بھارت کی جانب سے کوئی قدم اٹھایا گیا اور نہ ہی پاکستان کی جانب سے۔ اس وقت پاکستان کے طالبعلم ووہان میں موجود ہیں اور اپنی حکومت سے گزارش کررہے کہ وہ انھیں یہاں سے نکالیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں