بریکنگ نیوز مریم نواز باہر جائے گی یا نہیں ؟ فیصلہ سنا دیا گیا

لاہور (ویب ڈیسک) پنجاب حکومت نے نواز شریف کی تازہ رپورٹس پر اعتراضات اٹھا دئیے، سابق وزیراعظم کی تمام میڈیکل رپورٹس نہیں بھجوائی گئیں۔ سینئر ڈاکٹرز نے کہا ہے کہ ایک خط کے ذریعے کسی بھی مریض کی صحت کو جانچنا ممکن نہیں، خط کے مندرجات کے ثبوت ساتھ لف ہی نہیں کئے گئےجبکہ صوبائی وزیر قانون راجہ بشارت نے کہا ہے کہ ڈاکٹر عدنان کی خواہش پر مریم نواز کی بیرون ملک روانگی کا فیصلہ نہیں کیا جا سکتا، پنجاب حکومت نوازشریف کی میڈیکل رپورٹس پر ایک دو روز میں فیصلہ کر لے گی، حمزہ شہباز کی ضمانت کا مطلب یہ نہیں کہ سرکاری وکلا کی کارکردگی ناقص تھی۔ گزشتہ روزیہاں پی ایم ایس کے نو منتخب عہدیداروں کی تقریب حلف برداری کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیرقانون راجہ بشارت نے کہا کہ مریم نواز کی بیرون ملک روانگی سمیت ڈاکٹر عدنان کی تو بے شمار خواہشات ہیں، نواز شریف کی میڈیکل رپورٹس پر فیصلہ ایک دو روز میں ہو جائے گا، پنجاب حکومت کے پاس عدالت میں جانے کا آپشن موجود ہے۔اپوزیشن لیڈر میاں حمزہ شہباز کی ضمانت کے بارے صوبائی وزیر قانون راجہ بشارت بولے کہ اس ضمانت کو سرکاری وکلا کی ناقص کارکردگی قرار نہیں دیا جا سکتا، ہر کیس کا اپنا میرٹ ہوتا ہے،ہمیں کیس ٹو کیس دیکھنا پڑے گا۔ ذرائع کے مطابق محکمہ داخلہ پنجاب پہلے ہی نوازشریف کی تازہ رپورٹس پر بھی تحفظات کا اظہار کر چکا ہے۔ مسلم لیگ (ن) کے رہنما احسن اقبال نے کہا ہے کہ مریم نواز کو والد کی تیمارداری کیلئے بیرون ملک جانے سے روکناحکومت کی تنگ نظری ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ احسن اقبال نے کہا کہ مریم نواز کو اپنے والد میاں نواز شریف کی تیمارداری کیلئے بیرون ملک نہ جانے دینا حکومت کی کم ظرفی ہے،۔احسن اقبال نے کہا کہ ہم نے پرویز مشرف کے مارشل لا کا بھی سامنا کیا ہے، اس میں بھی بہت سختیاں تھیں،حکمران بیمار والد کو بیٹی سے دور رکھ کر اذیت دینا چاہتی ہیں اور حکومتی کردار کی ایسی پستی کی مثال تاریخ میں نہیں ملتی ہے۔احتساب عدالت میں پیشی پر آئے سابق وزیر اعظم اور مسلم لیگ ن کے رہنما شاہد خاقان عباسی نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ مریم نواز نے ضمانت کیلئے درخواست دی ہے، عدالت کا جو فیصلہ ہو گا قبول کریں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں