عالم دین کا 6 سالہ بچی کیساتھ زیادتی ، افسوسناک واقعہ کہاں پیش آیا؟ خبر پڑھ کر آپ کی بھی آنکھیں نم ہوجائینگی

اسلام آباد(نیوزڈیسک)عالم دین کا 6 سالہ بچی کے ساتھ مبینہ زیادتی کا کیس واپس لینے کے لیے دھمکیاں، واقعے کا مقدمہ قریبی تھانے میں درج کروایا گیا، بچی کے خاندان نے وزیراعلیٰ پنجاب سے درخواست کی کہ انہیں تحفظ فراہم کیا جائے۔ تفصیلات کے مطابق لاہور کے علاقے بھٹہ چوک کے قریبی گاؤں گوہاوہ سے تعلق رکھنے والی 6 سالہ بچی تبیتا سے مبینہ زیادتی کا واقعہ سامنے آیا اور اب اس کے اہل خانہ پر خاموش رہنے کے لئے دباؤ ڈالا جارہا ہے۔ایف آئی آر میں کہا گیا ہے کہ تبیتا اپنی گلی میں کھیل رہی تھی کہ وقاص نامی شخص نے اسے لالچ دی اور اسے اپنے گھر لے گیا۔جب تبیتا وقت پر اپنے گھر واپس نہیں آئی تو اس کے والد نے اس کی تلاش شروع کردی۔ محلے کے لوگوں نے انہیں اطلاع دی کہ انہوں نے دیکھا ہے کہ وقاص اسے اپنے گھر لے جارہا تھا۔جب متاثرہ لڑکی کے والد وقاص کے گھر پہنچے تو انہوں نے اپنی بیٹی کو روتے ہوئے پایا۔اس نے اپنے والد کو بتایا کہ مجرم نے اسے کپڑے اتارے اور جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا۔ جب اس نے چیخنا اور جارحانہ انداز میں اس کا مقابلہ کرنا شروع کیا تو اس نے اسے باہر گلی میں چھوڑ دیا۔ تبیٹا کے اہل خانہ نے پولیس تھانے میں شکایت درج کروائی جسکے بعد اب ایک مقامی مولوی انہیں دھمکی دے رہا ہے کہ وہ اس کیس کو واپس لے لیں۔ بتایا گیا ہے کہ یہ خاندان معاشی طور پر بہت کمزور ہے اور انہوں نے رہنے کے لیے اپنا گھر بنایا تھا جسے وہ چھوڑنے پر مجبور ہو گئے ہیں، خوف نے انھیں نقل مکانی کرنے پر مجبور کردیا ہے اور وہ اس وقت کرائے کے مکان میں راہش پذیر ہیں۔ انہوں نے وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار سے مطالبہ کیا ہے کہ انھیں تحفظ فراہم کیا جائے اور انھیں جلد ازجلد انصاف فراہم کیا جائے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں